بھارتی کسانوں کا احتجاج جاری، پورا ملک مفلوج کردیا۔

احتجاج کرنے والے کسان ہندوستان بھر میں 32 مقامات پر جمع ہیں۔

احتجاج کرنے والے ہندوستانی کسانوں نے جاری ملک گیر ہڑتال یا بھارت بند کے درمیان دہلی ، پنجاب اور ہریانہ میں 32 مقامات پر دھرنا دینا شروع کردیا ہے اور وہ سڑکیں ، ریل راستوں اور شاہراہوں کو روک رہے ہیں۔
اس ناکہ بندی نے ریل نقل و حرکت کو متاثر کیا ہے ۔ ٹرینوں کے رکنے کے ساتھ، بھارتی مقامی میڈیا نے رپوٹ کیا ، اب تک شاتبدی کی چار ٹرینیں منسوخ کردی گئیں ہیں۔

کسانوں کی یونینوں کے اتحاد ، مشترکہ کسان مورچہ (ایس کے ایم) نے حال ہی میں منظور کردہ تینوں فارم قوانین کے خلاف احتجاج میں ملک گیر ہڑتال کا مطالبہ کیا ہے۔ یونین نے بتایا کہ صبح 6 بجے شروع ہونے والی ہڑتال شام 6 بجے تک جاری رہے گی۔

Advertisement

یہ احتجاج 26 مارچ کو چار ماہ کے موقع پر منایا جارہا ہے جب سے نومبر میں کسانوں کی تحریک شروع ہوئی تھی۔ کسان رہنما بوٹا سنگھ برجگل نے کہا ، “پُرامن احتجاج صبح سے شام تک جاری رہے گا۔”
آج کے بھارت احتجاج کے پیش نظر ، کسانوں نے دہلی-غازی پور بارڈر بند کردیا ہے۔ ٹریفک پولیس نے مسافروں کو ہدایت کی ہے کہ وہ اس راستے سے گریز کریں۔ امبالا میں مظاہرین نے شاہ پور کے قریب جی ٹی روڈ اور ریلوے ٹریک کو روک دیا ہے۔

ہڑتال کے دوران ، تمام کاروباری ادارے بند رہیں گے اور کسی سڑک اور ریل ٹریفک کو چلنے کی اجازت نہیں ہوگی۔

کسانوں کے ذریعہ اعلان کردہ یہ دوسری ملک گیر ہڑتال ہے۔ پہلا بھارت احتجاج 8 دسمبر کو ہوا ، اس دوران دہلی ، ہریانہ ، پنجاب ، مہاراشٹر ، کرناٹک ، تمل ناڈو اور آسام میں ادارے بند ہوگئے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *