جہانگیر ترین نے حزب اختلاف کی دو بڑی جماعتوں کی پیشکش مسترد کر دی۔

اسلام آباد: حزب اختلاف کی دو بڑی جماعتوں نے پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے رہنما جہانگیر ترین سے رابطہ کیا ہے اور ذرائع کے حوالے سے حکومت مخالف مہم کو آگے بڑھانے کے لئے اپنے اتحادیوں کی حمایت حاصل کرنے کے بدلے میں ایک معاہدے کی پیشکش کی ہے.

ذرائع نے بتایا کہ جہانگیر ترین سے دو بڑی اپوزیشن جماعتوں نے متعدد بار رابطہ کیا ہے۔ اہم پارٹیاں کئی مہینوں سے سیاستدان سے رابطے میں ہیں اور انہیں لندن کے منصوبے پر غور کرنے پر راضی کرنے کی بھی کوشش کر رہی ہیں۔
معلوم ہوا ہے کہ مسلم لیگ (ن) کے سپریمو اور سابق وزیر اعظم نواز شریف نے جہانگیر ترین کو لندن میں ملاقات کے لئے چپکے سے ایک پیغام بھیجا ہے ، دوسری جانب مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف نے جیل جانے سے پہلے ہی معاملات طے کرنے کا پیغام دیا۔

شہباز شریف نے بھی اپنی پسند کے ایک ’قابل اعتماد شخص‘ کے ذریعہ ترین کو ایک ’معاہدہ‘ کی پیشکش کی۔ معلوم ہوا کہ لندن میں موجودگی کے دوران مسلم لیگ (ن) کی قیادت نے ترین سے رابطہ کیا تھا ، جہاں حسین نواز نے تحریک انصاف میں رہتے ہوئے پی ٹی آئی رہنما کے اتحادیوں کی حمایت کے بدلے ایک معاہدے پر انہیں راضی کرنے کی کوشش کی تھی۔

Advertisement

ترین سے یہ بھی کہا گیا تھا کہ وہ نواز شریف سے رابطہ کرنے کی کوشش سے متعلق معاملات کو خفیہ طور پر رکھیں۔ اس پیشکش پر ، جہانگیر ترین نے جواب دیا کہ ان کی سیاسی جماعتوں کو تبدیل کرنے کی عمر گزر چکی ہے اور اب وہ سیاست جاری رکھنے کے اہل نہیں ہیں۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی قیادت نے بھی ایک اجلاس کے لئے ترین کو ایک پیغام بھیجا ہے اور ساتھ ہی سینیٹ انتخابات کے دوران ان سے رابطہ بھی کیا۔ ذرائع نے بتایا کہ اس سے قبل یوسف رضا گیلانی نے انتخابی مہم کے لئے ترین کا طیارہ استعمال کیا تھا جسے عمران خان نے بھی استعمال کیا تھا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *