عدالت کا شہباز شریف کو بڑا ریلیف، ضمانت منظور کر لی۔

لاہور ہائیکورٹ نے پاکستان مسلم لیگ نواز کے صدر شہباز شریف کی آمدنی کے معلوم ذرائع سے زائد اثاثوں میں ضمانت منظور کرلی۔
گذشتہ ہفتے عدالت نے شہباز کی ضمانت 5 Rs ملین روپے کے مچلکے جمع کروانے پر منظور کرلی تھی ، لیکن بینچ کے الگ الگ فیصلہ آنے کے بعد معاملہ چیف جسٹس ہائیکورٹ کے جسٹس محمد قاسم خان کو بھجوا دیا گیا۔

بعدازاں ، چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے شہباز شریف کی درخواست ضمانت کی سماعت کے لئے نیا تین رکنی بینچ تشکیل دیا تھا۔

جسٹس عالیہ نیلم اور جسٹس سید شہباز علی رضوی پر مشتمل جسٹس علی باقر نجفی کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے متفقہ طور پر فیصلے کا اعلان کیا۔

Advertisement

بینچ کی سربراہی کرنے والے جسٹس سرفراز ڈوگر نے شہباز کی ضمانت کی درخواست کی اجازت دے دی جبکہ اس کے دوسرے ممبر جسٹس اسجد جاوید غورال نے اسے بھی اہلیت پر مسترد کردیا۔ اپنے متنازعہ حکم میں ، جسٹس غورال نے سینئر جج پر یہ الزام بھی عائد کیا کہ وہ ضمانت ’یکطرفہ طور‘ دیتے ہوئے ضمانت جاری کرتے ہیں۔
جسٹس سرفراز نے لکھا کہ آشیانہ کیس میں شہباز شریف کو گرفتار کیا گیا ، اثاثوں کے معاملے میں انہیں گرفتار کیوں نہیں کیا گیا ، یہ بات سمجھ سے بالاتر ہے کہ نیب نے انکوائری کیوں ملتوی کردی ، شہباز شریف اکاؤنٹ میں ایک بھی لین دین کا پتہ نہیں چل سکا۔ تاہم ، نیب نے قبول کیا کہ ٹی ٹی آئی شریف کے نام ملزم کے نام پر بھیجی گئیں۔ جب کوئی ٹھوس شواہد موجود نہیں ہیں تو کسی کو کس طرح مجرم قرار دیا جاسکتا ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *