عدالت عظمیٰ نے بنیادی میکانزم کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے تجویز پیش کر دی۔

اسلام آباد: اٹارنی جنرل خالد جاوید خان نے آئین کے آرٹیکل 184 (3) کے تحت بنیادی حقوق کے نفاذ کے لئے اپنے موروثی دائرہ اختیار کی سپریم کورٹ میں ایک مقصدی میکانزم تیار کرنے کی ضرورت پر روشنی ڈالی۔

اے جی پی نے تسلیم کیا ، “یہ اختیار عدالت عظمیٰ نے بہت احتیاط کے ساتھ استعمال کیا ہے ، لیکن تجویز پیش کی کہ اب وقت آگیا ہے کہ عدالت عظمیٰ کچھ معروضی ہدایات اور طریقہ کار پر غور و فکر کرے۔

اے جی پی نے مشاہدہ کیا کہ اس طرح کے رہنما خطوط سے ضرورت سے زیادہ استعمال کو روکنے میں مدد ملے گی اور اس کا نتیجہ ہمارے فقہ کے ساتھ ساتھ عدلیہ کے لئے بھی فائدہ مند ہوگا۔

Advertisement

خالد جاوید عدالت روم نمبر 1 میں سبکدوش ہونے والے سپریم کورٹ کے جج جسٹس منظور احمد ملک کے اعزاز میں فل کورٹ ریفرنس سے خطاب کر رہے تھے۔
چیف جسٹس گلزار احمد اور جسٹس منظور ملک کے علاوہ پاکستان بار کونسل کے وائس چیئرمین خوشدل خان نے بھی اس ریفرنس سے خطاب کیا۔

ماضی میں بھی عوامی مفادات کی قانونی چارہ جوئی سے نمٹنے کے لئے عدلیہ کے قواعد و ضوابط وضع کرنے کی ضرورت کا اظہار کیا گیا تھا جہاں بار کونسلوں اور انجمنوں کی ایک بڑی تعداد نے کیس مینجمنٹ کے نظام کو بہتر بنانے کی ضرورت پر زور دیا تھا۔

یہاں تک کہ پاکستان بار کونسل (پی بی سی) نے 2017 میں ایک ایسے قانون کی ضرورت کو اجاگر کرتے ہوئے منظور کیا تھا جس میں آرٹیکل 184 (3) کے تحت اعلی عدالتوں کے ذریعہ منظور شدہ چیلینجنگ فیصلوں کی گنجائش باقی رہ گئی تھی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *