او آئی سی اور عرب لیگ جیسی تنظیموں کا کوئی کردار ادا نہ کر پانا مسلمانوں کے لیے لمحہ فکریہ ہے

ایسا لگتا ہے کہ غزہ کی پٹی پر اسرائیلی جارحیت کے 11 دن بعد حماس اور اسرائیل کے مابین خاموشی کا آغاز ہو رہا ہے۔ تخمینے مختلف ہیں لیکن کچھ اطلاعات کے مطابق اسرائیلیوں کے ہاتھوں 250 کے لگ بھگ فلسطینی مرد ، خواتین اور بچے جان سے جا چکے ہیں اور غزہ کے متعدد حصے ملبہ بن گئے ہیں۔

مصر نے اس معاملے کو ختم کیا تھا اور عالمی برادری نے اس کا خیرمقدم کیا ہے۔ امداد نے بالآخر تباہ شدہ علاقے میں پہنچنا شروع کردیا ہے کیونکہ فلسطینیوں نے اپنی خراب حال زندگیوں کی تعمیر نو کے تکلیف دہ عمل کا آغاز کیا ہے۔ یہ معاملہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی طرف سے فلسطینی شہری آبادی پر جاری مظالم سے اسرائیل کو روکنے اور اسکولوں اور اسپتالوں سمیت آباد آباد علاقوں کو نشانہ بنانے میں ناکام ہونے کے نتیجے میں عمل میں آیا ہے۔

بیشتر مغربی حکومتیں دونوں فریقوں کے مابین غلط مساوات کھینچ رہی ہیں اور اسرائیل کو جارحیت پسند کی حیثیت سے شناخت کرنے سے انکار کرتی ہیں۔ تاہم ، بین الاقوامی رائے عامہ فلسطینیوں کے حق میں ہے اور غزہ میں غیر مسلح آبادی پر اسرائیل کی جارحیت کی بڑے پیمانے پر مذمت کی گئی۔

Advertisement

اس سارے بدقسمت واقعہ میں جو کچھ غائب تھا وہ تھا OIC اور عرب لیگ جیسی تنظیموں کا کوئی کردار۔ پاکستان ایک متحرک پالیسی پر عمل پیرا تھا اور وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے فلسطینی مقصد کے حق میں سفارتی کوششوں کو بہتر بنانے کے لئے نیویارک میں اقوام متحدہ کے ہیڈکوارٹر کا سفر کرکے اپنے محاذ سے ان کوششوں کی قیادت کی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *