پنجاب سیف سٹی 140 ملین ڈالر کا پروگرام شدید مسائل سے دوچار ہو گیا

لاہور: حفاظت ، سیکیورٹی اور ٹریفک مینجمنٹ میں گیم چینجر کی حیثیت سے سامنے آنے والے، پنجاب سیف سٹی اتھارٹی (پی ایس سی اے) نے مبینہ طور پر انتظامیہ کی پریشانیوں ، ملازمین کے لئے کیریئر ڈھانچے کی عدم موجودگی اور ان کے لئے کام کرنے کے ماحول کو بگاڑنے کی وجہ سے ختم ہونا شروع کردیا ہے۔

ذرائع کے مطابق ، میگا پراجیکٹ کو چلانے کے لئے موجودہ انتظامیہ کی دلچسپی نہ ہونے کی وجہ سے ، پی ایس سی اے کا 140 ملین ڈالر کا پروگرام ان دنوں بہت سارے معاملات سے دوچار ہے۔

ان مسائل کے نتیجے میں ، بہت سے اہل اور تربیت یافتہ افسر ، انجینئر اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ماہرین ملازمت چھوڑ رہے ہیں۔

Advertisement

بی پی ایس۔ 17 میں لگ بھگ 650 ‘پولیس مواصلات کے افسران‘ سن 2016 سے خدمت کو باقاعدہ بنانے کا مطالبہ کر رہے ہیں، صوبائی دارالحکومت کا آدھا حصہ غیر فعال کیمرے کی وجہ سے نگرانی میں نہیں ہے جبکہ ای چالاننگ بھی کافی کم ہے۔

خود مختار اتھارٹی پنجاب سیف سٹی آرڈیننس 2015 کے تحت مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے دوران ایک مربوط کمانڈ ، کنٹرول اور مواصلاتی پروگرام کے قیام اور بحالی کے لئے قائم کی گئی تھی۔
اتھارٹی کے نجی عہدیدار ، نوحہ کناں ہیں کہ پی ایس سی اے کے بہت سارے عملے نے نجی شعبے میں شمولیت اختیار کرلی ہے جبکہ موجودہ ملازمین کم تنخواہ ، خراب کام کے ماحول کی وجہ سے اپنی ملازمت سے عدم اطمینان ہیں اور ‘قابل قبول کیریئر ڈھانچہ’ کے لیے پرامید نہیں ہیں .

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *