پاکستان نے پچھلے سال کی نسبت اس سال گندم کی پیداوار کا ریکارڈ ہدف حاصل کرلیا۔

اس سیزن میں ملک نے مجموعی طور پر 28.75 ملین ٹن گندم کی مجموعی پیداوار حاصل کی ہے جو 26.78 ملین ٹن کے ہدف سے 20 لاکھ ٹن زیادہ ہے۔ حکومت کا دعوی ہے کہ یہ گندم نیچے کے علاقے میں 3.25 فیصد اضافے کے ذریعہ حاصل کی گئ ہے، سیزن کے مناسب موسم نے صحتمند اناج اگانے میں مدد کی ، اور زیادہ محنت مزدوری کرنے کے ساتھ ساتھ کھیتوں کو بہتر بنانے میں مدد کی اگلے سال اپنی فصل کے لیے بہتر قیمت کے تناسب پر کاشتکاروں کے ذریعہ استعمال کریں۔

اگر کوئی سرکاری اعداد و شمار پر نظر ڈالتا ہے ، اگرچہ کچھ ماہرین کو سرکاری اعداد و شمار پر شبہ ہے کہ اس کے پاس پیداوار میں اضافے کی حمایت میں کوئی خاطر خواہ وجہ موجود نہیں ہے ، لیکن اناج کی اس اہم پیداوار کے باوجود بھی ملک اپنی غذائی تحفظ حاصل کرنے سے دور ہے۔

فیڈرل کمیٹی برائے زراعت (ایف سی اے) نے اندازہ لگایا ہے کہ اگلی فصل تک اپنے عوام کو کھانا کھلانے کے لئے ملک کو 29.50 ملین ٹن ، بشمول ایک ملین ٹن اسٹریٹجک ذخائر کی ضرورت ہوگی۔ پاکستان ایگریکلچر ریسرچ کونسل (پی اے آر سی) کا تخمینہ ہے کہ سالانہ 125 کلوگرام گندم کی کھپت ایک عام شہری کی اوسطا 60 پی سی روزانہ کی خوراک ہوتی ہے۔ حال ہی میں 2017 کی مردم شماری کے جاری کردہ نتائج نے قومی آبادی کو 220.5 ملین سے زیادہ بتادیا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ ملک میں غذائی تحفظ کو پورا کرنے کے لئے کافی گندم موجود ہے اور تقریبا 500 500،000 ٹن اناج کی درآمد سے وہ اپنے اسٹریٹجک ذخائر کو برقرار رکھ سکے گا کیونکہ تقریبا 324،000 ٹن کیریور اسٹاک موجود ہے۔

Advertisement

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *