پنجاب کے ہیلتھ کیئر اور میڈیکل ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ میں نرسوں کی جعلی پوسٹنگ کا انکشاف ہو گیا۔

لاہور: محکمہ پنجاب کے ہیلتھ کیئر اور میڈیکل ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ نے محکمہ اور اسپتالوں کے عہدیداروں کے نیٹ ورک کے ذریعہ مبینہ طور پر تیار کردہ جعلی پنجاب پبلک سروس کمیشن (پی پی ایس سی) پر نرسوں کی پوسٹنگ کے اسکینڈل کا انکشاف کیا ہے۔

 

 

Advertisement

محکمہ نے ابتدائی طور پر نشاندہی کی ہے کہ کوٹ خواجہ سعید اسپتال اور پنجاب انسٹیٹیوٹ آف کارڈیالوجی (پی آئی سی) میں گذشتہ چار سالوں سے خدمات انجام دینے والی 18 انچارج نرسوں (بی پی ایس ۔16) کی پی پی ایس سی نے کبھی سفارش نہیں کی تھی اور نہ ہی ان کے تقرری کے احکامات محکمہ میں اپلوڈ کیے گئے تھے۔

 

 

نرسیں ، جن کی تقرری کے احکامات جعلی قرار پائے گئے ، وہ ہیں: حمیرا، سعدیہ اصغر، فرزانہ اختر، ردا فاطمہ، ارم مختار، آئرین فیروز، مدیحہ اکرم، مہوش، حفیظہ فریال، ناظرہ جاوید، روبینہ جمیل، سنبل بتول، شفقت، حمیرا رانی اور کوہ خواجہ سعید اسپتال میں خدمات انجام دینے والی فرحانہ علی نیز فائزہ فلک شیر، زاہدہ پروین اور سعدیہ رشید پی آئی سی میں خدمات انجام دے رہی ہیں۔

 

 

محکمہ نے تمام 18 انچارج نرسوں کو شوکاز نوٹس جاری کرنے کے بعد انکی ملازمت ختم کرنے کی سفارش کی ہے۔ اس جعلساز تقرریوں میں ملوث مستفیدین اور اہلکاروں سے سرکاری رقم / تنخواہوں کی وصولی کا بھی مشورہ دیا گیا ہے۔

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *