رانا ثنا اللہ نے عثمان بزدار پر رشوت لے کر بیوروکریٹس کی تقرریاں کرنے کا الزام لگا دیا۔

لاہور: مسلم لیگ (ن) بزدار انتظامیہ کے خلاف سنگین الزامات عائد کرچکی ہے ان کا الزام ہے کہ وہ رشوت لینے کے بعد صوبے میں اعلی عہدوں پر بیوروکریٹس کی تقرری کررہا ہے ، اور یہ سوال اٹھا رہا ہے کہ کیا انٹیلیجنس بیورو (آئی بی) وزیر اعظم عمران خان کو اپنے پاس رکھے ہوئے ہے۔

 

 

Advertisement

وزیر اعظم عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے مسلم لیگ (ن) پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ نے کہا: “کیا پنجاب میں جو ہو رہا ہےآپ اس سے آنکھیں بند کر رہے ہیں؟ چیف منسٹر ہاؤس کرپشن کا گڑھ بن گیا ہے۔ پنجاب کی تاریخ میں پہلی بار ، ڈپٹی کمشنرز (ڈی سی) اور پولیس سپرنٹنڈنٹ (ایس پی) وزیراعلیٰ ہاؤس کو 20 ملین روپے رشوت دے کر اپنی پسند کی پوسٹنگ حاصل کررہے ہیں۔

 

 

مسلم لیگ (ن) کے واضح الفاظ میں رہنما نے یہ کہا کہ وزیر اعلی عثمان بزدار کے پاس ایک سابق وزیر اور ایک عہدیدار تھے ، جو ان کے کہنے پر رشوت کی رقم وصول کرتے اور سرکاری عہدوں کو ختم کرتے رہے۔ انہوں نے کہا ، اور رشوت نہ دینے والے بیوروکریٹس تین مہینوں تک ایک ہی عہدے پر نہیں رہ سکتے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پہلی بار سیکرٹری کی سطح پر پوسٹنگ بھی ‘فروخت’ کی جارہی ہیں۔

 

 

ثناء اللہ نے وزیر اعظم سے پوچھا کہ وہ ’خاموش تماشائی‘ کی حیثیت سے کیوں کام کررہے ہیں۔ انہوں نے پوچھا ، “کیا آپ (عمران خان) آئی بی اور دیگر ایجنسیوں سے پنجاب میں ٹرانسفر اور پوسٹنگ سے متعلق اس بدعنوانی کے بارے میں اطلاعات نہیں لیتے ہیں؟ انہوں نے کہا کہ ‘ نااہل’ پی ٹی آئی کی حکومت پنجاب کو بدعنوانی میں غرق کر چکی ہے۔

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *