سپریم کورٹ نے ہائی وے بلوچستان کی خستہ حالی پر برہمی کا اظہار کیا اور نیشنل ہائی وے اتھارٹی سے رپورٹ طلب کرلی۔

اسلام آباد: سپریم کورٹ نے ہائی وے بلوچستان کی خستہ حالت پر برہمی کا اظہار کیا اور ملک کی بڑی سڑکوں کی دیکھ بھال کے بارے میں نیشنل ہائی وے اتھارٹی (این ایچ اے) سے رپورٹ طلب کرلی۔

 

چیف جسٹس آف پاکستان گلزار احمد ، جسٹس مظہر عالم خان میاں خیل اور جسٹس سید مظہر علی نقوی پر مشتمل تین ججوں کے سپریم کورٹ کے بنچ نے یہ مشاہدہ ہائی وے بلوچستان کی ناقص صورتحال سے متعلق ازخود نوٹس کیس اٹھانے کے بعد کیا (این۔ 25)، جسے آر سی ڈی ہائی وے بھی کہا جاتا ہے۔

Advertisement

 

 

عدالت نے این ایچ اے سے بڑی شاہراہوں پر ہونے والے واقعات کی تعداد کے بارے میں ایک رپورٹ پیش کرنے کو بھی کہا۔ 813 کلو میٹر طویل آر سی ڈی شاہراہ افغانستان ، داخلے سے قبل کراچی ، بیلہ ، خضدار ، قلات ، مستونگ ، کوئٹہ اور چمن سے ہوتی ہے۔

 

 

سب سے زیادہ واقعات بلوچستان کے اضلاع بیلہ ، خضدار ، قلات اور مستونگ کے درمیان واقع علاقے میں ہوئے۔

سماعت کے دوران چیف جسٹس نے حیرت کا اظہار کیا کہ این ایچ اے کو شاہراہوں کی بحالی کے لئے مختص فنڈز کہاں سے چلے گئے ہیں کیوں کہ تقریبا تمام بڑی سڑکیں خراب حالت میں ہیں۔

 

 

عدالت اس حقیقت پر تلخ ہوگئی کہ بارش ہوتے ہی سڑکیں گڑھے میں بدل گئیں اور صرف این ایچ اے کی لاپرواہی کی وجہ سے سانحات میں بے شمار بے گناہ زندگیاں ضائع ہوگئیں۔

 

 

سپریم کورٹ نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ این ایچ اے بدعنوانی کے لئے مشہور ہوا ہے۔ ایک جج نے مشاہدہ کیا کہ یہاں تک کہ ہائی ویز پر پٹرول پمپ ، ہوٹلوں اور دکانیں پھیل چکی ہیں۔

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *