لاہور ہائی کورٹ نے قومی احتساب بیورو سے خواجہ آصف کی درخواست پر دلائل جلد آگے بڑھانے کی ہدایت کردی۔

لاہور: لاہور ہائیکورٹ نے قومی احتساب بیورو (نیب) کے پراسیکیوٹر مسلم لیگ (ن) کے ایم این اے خواجہ آصف کی درخواست ضمانت اور اثاثوں سے متعلق اثبات میں اپنے دلائل آگے بڑھانے کی ہدایت کردی۔

 

 

Advertisement

جسٹس عالیہ نیلم کی سربراہی میں دو ججوں کے بنچ نے انتباہ کیا کہ مزید کوئی التواء منظور نہیں کی جائے گی اور پراسیکیوٹر کو ہدایت کی کہ وہ 21 جون کو آئندہ سماعت پر اس کیس کا متعلقہ ریکارڈ پیش کریں۔

 

 

مسلم لیگ (ن) کے رہنما کے وکیل نے عدالت کے روبرو بیان کیا کہ ان کا مؤکل جنوری سے جوڈیشل ریمانڈ پر جیل میں ہے لیکن بدعنوانی کے نگران ڈاگ نے ابھی تک ان کے خلاف ریفرنس داخل نہیں کیا ہے۔

 

 

پراسیکیوٹر نے بتایا کہ ریفرنس منظوری کے لئے نیب چیئرمین کو بھجوا دیا گیا ہے اور جلد ہی احتساب عدالت میں دائر کیا جائے گا۔

 

یکم جون کو لاہور ہائیکورٹ کے ایک جج نے خواجہ آصف کی درخواست ضمانت پر سماعت سے انکار کردیا۔

 

ڈویژن بینچ کے ممبر جج اسجد جاوید غورال خود اس معاملے سے باز آ گئے ، جس کے بعد اس معاملے کو سماعت کے لئے ایک اور بنچ کے سامنے طے کرنے کے لئے چیف جسٹس کو بھیج دیا گیا۔

 

 

آصف نے اپنے وکیل بیرسٹر حیدر رسول مرزا کے توسط سے درخواست دائر کی جس میں کہا گیا ہے کہ قومی احتساب بیورو (نیب) نے انہیں گذشتہ سال 29 دسمبر کو اسلام آباد سے حراست میں لیا تھا۔

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *