یورپی کمپنی نے گرین لائن سروس کی لانچ سے قبل حکومت کی مالی اعانت سے چلنے والی سکیم میں اربوں کی کرپشن کا انکشاف کر دیا۔

کراچی: بظاہر گرین لائن سروس کے انتظار میں یہ لگتا ہے کہ یہ لانچ سے قبل ہی مالی تنازعہ میں گھری ہوئی ہے۔ ایک یورپی، جس نے اس منصوبے کے لئے اپنی تکنیکی مدد اور خدمات کی پیش کش کی ہے ، ملک کے اینٹی گرافٹ اور انوسٹی گیشن اداروں کا دروازے کھٹکھٹارہا ہے اور سفارتی راہداریوں کے ذریعے کامیابی کی کوشش بھی کرچکا ہے۔

 

 

Advertisement

جس کی شکایت یہ ہے کہ ایک پاکستانی ٹھیکیدار وفاقی حکومت کی مالی اعانت سے چلنے والی اس اسکیم نے قومی خزانے کو اربوں روپے کی جعلسازی کے ساتھ اپنے نام کیا اور اس کی شہرت اور پیشہ ورانہ موقف کو بری طرح نقصان پہنچا۔

 

 

یہ شکایت اسپین میں مقیم GRUPSA سے آئی ہے ، جسے دنیا بھر میں خودکار سازوسامان میں پیش پیش کرنے والوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے ، اور یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ کمپنی نے گرین لائن منصوبے کے لئے ڈیڑھ لاکھ یورو کے مقابلے میں پلیٹ فارم اسکرین ڈورز (پی ایس ڈی) مہیا کیے ہیں۔

 

 

یوروپی فرم سے یہ فراہمی اس منصوبے کے ایک پاکستانی ٹھیکیدار کے ذریعہ دو سال سے بھی زیادہ عرصہ قبل کی گئی تھی ، لیکن اس کو معلوم ہوا کہ اس کی شہرت داؤ پر لگی ہے کیونکہ حکومت پاکستان میں خدمات کے لئے ڈھائی ملین یورو سے زیادہ وصول کیا جارہا ہے۔

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *